آئی ایم ایف کے پاکستان کے ساتھ معاملات طے ہو گئے

0
62

اسلام آباد (اے ون نیوز) آئی ایم ایف کے پاکستان کے ساتھ معاملات طے پا گئے۔میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ پاکستان اور آئی ایم ایف کے مابین معاملات طے ہو گئے۔آئی ایم ایف کا بیل آؤٹ پیکج تین سال کے لیے ہو گا۔ آئی ایم ایف نے پاکستان کی مجوزہ اثاثہ جات ڈیکلئیریشن اسکیم سے اختلاف نہیں کیا۔اثاثہ جات ڈکلئیریشن اسکیم کی حتمی منظوری کابینہ سے لی جائے گی۔

آئی ایم ایف ایف اے ٹی ایف نے اس سکیم پر کوئی اعتراض نہیں اٹھایا۔میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ آئی ایم ایف اور عالمی بینکوں کی کے اجلاسوں میں شرکت کے بعد پاکستانی وفد پاکستان پہنچ گیا ہے۔پاکستان نے مجوزہ اسکیم کا مسودہ آئی ایم ایف اور ایف اے ٹی ایف سے پہلے ہی شئیر کر لیا تھا۔آئی ایم ایف اور ایف اے ٹی ایف نے اس اسکیم پر کوئی اعتراض نہیں اٹھایا۔

قرضہ 6 ارب ڈالرہو یا 9 ارب ڈالر، فیصلہ آئی ایم ایف وفد کے دورہ پاکستان پر کیا جائے گا،آئی ایم ایف کے وفد کے دورے کی تاریخ اگلے ایک دو روز میں طے کی جائے گی۔آئی ایم ایف کے ساتھ بیل آؤٹ پیکج پر دستخط اپریل کے وسط میں ہی کر لیے جائیں گے۔اثاثہ جات ڈکلئیریشن اسکیم کو آئی ایم ایف کے دورے سے پہلے قانونی شکل دی جائے گی۔واضح رہے پاکستان نے معاشی حالات کے پیش نظر آئی ایم ایف سے بیل آؤٹ پیکج حاصل کرنے کا فیصلہ کیا تھا جس کے لیےآئی ایم ایف سے مذاکرات بھی جاری تھے۔

اس سے قبل وفاقی وزیر خزانہ اسد عمر نے رواں ماہ کے اوائل میں کہا تھا کہ عالمی بینک اور بین الاقوامی مالیاتی فنڈ کے گروپ کی اسپرنگ ملاقات کے بعد مشن جلد ہی اسلام آباد کا دورہ کرے گا، جس کے بعد اسی ماہ کے آخر تک معاہدے پر دستخط ہوجائیں گے۔واضح رہے کہ یہ ملاقاتیں گذشتہ ہفتے واشنگٹن میں ہوئی تھیں اور اتوار کو اس کا اختتام ہوگیا تھا۔

ان ملاقاتوں میں پاکستانی وفد کی قیادت وزیر خزانہ اسد عمر نے کی جو جمعہ کو نیویارک گئے تھے لیکن ان کی ٹیم میں شامل وزارت کے سینئر اور دیگر سرکاری ایجنسیوں کے حکام مزید مذاکرات کے کے واشنگٹن میں رک گئے تھے۔ بعد ازاں واشنگٹن میں ایک نیوز بریفنگ کے دوران اسد عمر نے کہا تھا کہ دونوں فریق بیل آؤٹ پیکج پر کم و بیش معاہدے پر پہنچ گئےہیں اور ہمیں اُمید ہے کہ ایک یا دو روز میں مکمل معاہدے پر پہنچ جائیں گے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here